عمرانیات » سفر نامہ / Suffer-nama

سفر نامہ / Suffer-nama

یوں تو بندہ (مراد بذات خود، یعنی میں یعنی عمران اقبال) ہر طرح کے سفر سے کوسوں دور بھاگتا ہے۔۔۔ یہاں تک کہ اگر تین گھنٹے کی فلائیٹ گزار کر لاہور بھی جانا پڑے تو جان پر بن آتی ہے۔۔۔ آخر کیا کریں ان تین گھنٹوں میں۔۔۔ سوائے سیٹ پر بیٹھے بیٹھے کروٹیں بدلنے کے۔۔۔ یا اپنے ہمسائے کی “ڈاکخانہ” ملانے کی کوشش اور پھر ان کے سفر کرنے کی ذاتی وجوہات سننے اور برداشت کرنے کے۔۔۔ آن فلائیٹ اینٹرٹینمنٹ بھی کچھ زیادہ اینٹرٹین نہیں کرتا۔۔۔ ایک دو کلک کے بعد بور ہو جاتا ہوں۔۔۔۔

میرا یار برھان منہاس جو امریکہ میں رہائش پذیر ہے۔۔۔ اکثر ضد کرتا ہے کہ ویزہ لگواں اور امریکہ کا چکر لگا لوں۔۔۔ اور میں یہ سوچ کر ہی ویزہ کے لیے اپلائی نہیں کرپاتا کہ کون اٹھارہ گھنٹے جہاز میں بیٹھے۔۔۔ سفر سے میری بیزاریت کا عالم یہاں تک ہے کہ آئل اینڈ گیس کی ایک کانفرنس مئی میں ہیوسٹن میں منعقد ہو رہی ہے۔۔۔ اور میرا اس میں شرکت کرنا میرے کیرئیر کے لیے انتہائی فائدہ مند ثابت ہو سکتا ہے۔۔۔ میری کمپنی مجھے اور میری ایک کولیگ کو وہاں بھیجنے کا پروگرام بنا رہی ہے۔۔۔ مجھ سے پوچھا گیا تو میں نے سوچنے کے لیے وقت مانگ لیا ہے۔۔۔ اور ابھی تک کوئی فیصلہ نہیں کر پایا۔۔۔

واللہ، میں بھی عجیب بندہ ہوں۔۔۔ کہ نا تو سکون سے بیٹھا پاتا ہے۔۔۔ اور نا اپنی خاموش خلا میں کسی کی غیر ضروری مداخلت پسند کرتا ہے۔۔۔ سفر کے دوران وقت گزاری کے لیے کوئی کتاب پڑھنا تو بہتر محسوس ہوتا ہے۔۔۔ لیکن کسی اجنبی شخص سے “وقت گزاری” کرنا مجھے زرا بھی نہیں بھاتا۔۔۔ خیر۔۔۔ جیسے میں نے عرض کی کہ میں بڑا ہی عجیب بندہ ہوں۔۔۔ کوئی اور سمجھے تو سمجھے، میں تو خود کو زرہ برابر نہیں سمجھ پایا۔۔۔

اس مرتبہ سفر کی نوعیت کچھ ایسی تھی کہ اپنی گزری زندگی ایسے تجربے سے بلکل نافہم ہی رہی۔۔۔ اور وہ یہ تھی کہ بیگم صاحبہ اور صاحبزادی کے ہمراہ چھٹیاں گزاری جائیں۔۔۔ اور یہاں چھٹیوں سے مراد، ایک محدود مدت کے لیے آفس کی چخ چخ ، باقی دنیا سے کنارہ کشی ، کچھ پرانے اور نئے احباب سے ملاقات ہے۔۔۔ تو اپنی بارہ دن کی چھٹیوں کو ایسے پلان کیا کہ ڈسکہ، اپنے آبائی گاوں “بوبکانوالہ” ، گوجرانوالہ، لاہور، اسلام آباد، مری اور کراچی کی “سیاحت” کی جائے۔۔۔ اور ان بارہ دنوں میں جان، مال اور رشتے داروں سے عزت بچا کر واپس دبئی پہنچنا ہی شایدمیری کامیابی رہی۔۔۔

چیدہ چیدہ تجربے جن کے بارے میں لکھنے کا ارادہ ہے اور انشاءاللہ موقع ملا تو جلد ہی لکھ بھی دوں گا وہ یہ رہے۔۔۔

مری میں قیام اور تجربے
اسلام آباد میں انتہائی دلکش بلاگر دوست”بلاامتیاز” سے ملاقات۔۔۔
خانصپور میں ایک بزرگ “ٹورسٹ گائیڈ” سے ملاقات۔۔۔
کراچی میں دو دن کی روداد اور اپنے بہت عزیز دوست “وقار اعظم اور کاشف نصیر” سے ملاقات۔۔۔

(یہ سلسلہِ سفرنامہ امتیاز کی فرمائش پر لکھ رہا ہوں۔۔۔ ورنہ جو خوبصورت وقت گزرا، اس کے بارے لکھنے کے لیے الفاظ نہیں ہیں۔۔۔ اب بس دعا کریں کہ سلسلہ پورا لکھ ہی دوں۔۔۔)



11 تبصرے برائے “سفر نامہ / Suffer-nama”

  1. 1بلاامتیاز

    سفر نامے کی سیریز کا انتظار رہے گا، اور پورا لکھنے کے لیے دعا نہیں کسی اور چیز کی ضرورت ہے تمھیں 🙂

  2. 2انکل ٹام

    عمران بھائی میں تو کافی دنوں سے انتظار کر رہا تھا کہ آپ ایسا کچھ لکھیں گے

  3. 3جواد احمد خان

    بہت خوب جناب۔۔۔۔۔ سفر میرے لیے بھی آپ ہی کی طرح کا انگریزی کا سفر ہے۔ مجھے سفر سے تھوڑا خوف آتا ہے وجہ اسکی صرف حضرت انسان ہی ہے۔
    سفر نامے کا انتظار رہے گا۔ سفر نامہ کے لیے تمہید باندھنا اچھا لگا۔

  4. 4یاسر خوامخواہ جاپانی

    یرا جی۔۔۔۔۔۔۔سفر کیا جا سکتا ہے۔۔چاہے سو گھنٹے کا ہو،۔۔۔
    لیکن شرط یہ ہے ،کہ ساتھی کولیگ کا حدود اربعہ کیا ہے؟
    پاغلو ایسے موقع بار بار نی آتے ؛ڈڈ

  5. 5احمد عرفان شفقت

    میں تو بہت شدت سے انتظار کرنے لگ گیا ہوں آپکے سفرنامے کا.

  6. 6درویش خُراسانی

    عمران صاحب:
    سفر نامے کا انتظار ہے۔ہیوسٹن کانفرنس میں اگر کوئی مسئلہ نہ ہو تو جاو۔
    کہتے ہیں کہ سفر وسیلہ ظفر

  7. 7درویش خُراسانی

    آج کل اردو سیارہ اور اردو محفل پر سفرناموں کا موسم چل رہا ہے۔

  8. 8افتخار اجمل بھوپال

    سفر سے خوف مگر کمال یہ ہے کہ 12 دن میں ڈسکہ ۔ گوجرانوالہ ۔ لاہور ۔ اسلام آباد ۔ خانصپور ۔ مری اور کراچی ۔ جب کالج کے ساتھ ٹُوور پر گئے تھے تو بھی 12 دن میں اتنے شہر نہیں دیکھے تھے
    ہماری محرومی دیکھیئے کہ ہمارے شہر (اسلام آباد) میں سے اتنے بڑے لوگ ہو کر چلے گئے اور ہم سوئے رہ شاید ۔
    چلیئے کچھ تو فائدہ ہوا کہ پتہ چل گیا ۔ امتیاز رکھنے والی شخصیت بھی ہمارے شہر میں رہتی ہے

  9. 9عمران اقبال

    افتخار اجمل صاحب… شرمندہ مت کیجیے جناب… “بڑا آدمی”…!!! سر جی، مجھ سے زیادہ چھوٹا انسان شاید اس روئے زمین پر نہیں…

  10. 10کاشف نصیر

    جس وقت ہماری ملاقات ہوئی مجھے 103 بخار تھا لیکن یقین جانے مجھے تھوری دیر کے لئے اسکی شدت محسوس نہیں ہوئی. خوش گپیاں اور جوہر فوڈ اسٹریٹ کی کھلی فزا میں کڑھائی واقعی بہت یادگار تھی، لیکن آپ نے بل ادا کرکے کراچی والوں سے زیادتی کی.
    سفرناموں کا انتطار رہے گا.

  11. 11کاشف فضل

    تو جناب عمران صاحب
    بعد از سلام
    عرض ہے کہ
    کراچی میں آپ کے قیام میں بندہ کا بھی سہرا ہے میرے بغیر کراچی میں رات 4 بجے تک گھوم کے دیکھاتے
    ہاہاہا

تبصرہ کیجیے

 
error: خدا کا خوف کھاو بھائی، کیا کرنا ہے کاپی کر کے۔۔۔