عمرانیات » وہ ایک آنسو

وہ ایک آنسو

جمعرات, 18 اپریل 2013, 3:20 | زمرہ: عشق الہی, میری سوچ
ٹیگز: , ,

مورخہ 14 اپریل۔۔۔
مقام: مسجدِ نبوی ﷺ

بابِ جبرائیل اور بابِ البقیع کے درمیان ایک باریش نوجوان ہاتھ باندھے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے روضہ اقدس کے سامنے با ادب کھڑا تھا۔۔۔۔ میں  نے اس کے پاس سے گزرتے ہوئے اسے دیکھ کر اپنے چلنے کی رفتار کم کر لی۔۔۔  شاید اس کے معصوم چہرے پر ندامت تھی۔۔۔  میں نے چلتے چلتے بس اس کی آنکھوں سے ایک قطرہ آنسو گرتے دیکھا۔۔۔

وہ ایک آنسو مجھے شرمندگی کی اتاہ گہرائیوں میں پہنچا گیا۔۔۔   کہ میری آنکھیں اب بھی خشک تھیں۔۔۔



6 تبصرے برائے “وہ ایک آنسو”

  1. 1افتخار اجمل بھوپال

    آنسو نکلنے کی تین وجوہات ہیں ۔ ایک ۔ آدمی اپنے کئے پر پشیمان ہو ۔ دو ۔ فرطِ محبت سے ۔ تین ۔ اپنی بے بسی محسوس کر کے
    اس شخص پر تینوں کا اطلاق ہو سکتا ہے

  2. 2noureen tabassumm

    کچھ آنسو اندر کی طرف بھی گرتے ہیں جن سے وہی باخبر ہوتا ہے جس کے لیے ہوتے ہیں ہم بھی نہیں

  3. 3جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین

    دل کی مٹی نرم ہو جائے تو آنسو بہہ نکلتے ہیں۔اور نبی کریم صلیٰ اللہ علیہ وسلم کے روضہ مبارک پہ تو دل ویسے ہی نرم ہوجاتا ہے۔

  4. 4جواد احمد خان

    اگر روضہ رسول ﷺ پر اور کعبۃ اللہ پر بھی آنسو نہیں نکلیں گے تو کہاں نکلیں گے۔۔۔
    کیا کرنے بھیجے گئے تھے اور کیا کرڈالا ہے۔ بندگی کی کونسی لاج رکھی ہے۔ اپنے رب اور اپنے رسول ﷺ کو کب بندگی اور امتی ہونے سے خوش کیا ہے۔عمر گذر رہی ہے اور قلاش کے قلاش ہی ہیں۔ کونسا ایسا سرمایہ ہے جس پر جنت کے کسی گوشہ کی خریداری کا امکان تک ہوسکے۔

  5. 5Sarwat AJ

    دل کی مٹی نرم ہو جائے تو آنسو بہہ نکلتے ہیں۔
    Exactly but reasons may vary….

  6. 6کوثر بیگ

    آپ مسجدِ نبوی گئے یہ ہی کیا کم ہے۔۔ ہر ایک کا ہر موقعہ پر الگ الگ جذبہ و کیفیت اور اظہار کا طریقہ ہوتا ہے۔ آپ کو حاصری مبارک ہو

تبصرہ کیجیے

 
error: خدا کا خوف کھاو بھائی، کیا کرنا ہے کاپی کر کے۔۔۔