عمرانیات » چلو کچھ بات کرتے ہیں۔۔۔

چلو کچھ بات کرتے ہیں۔۔۔

اتوار, 27 مارچ 2011, 19:55 | زمرہ: میرا پسندیدہ کلام, میری محبّت
ٹیگز:

چلو کچھ بات کرتے ہیں۔۔۔Man in Front on Lake

خاموشی کا سحر ٹوٹے۔۔۔

چلو کچھ بات کرتے ہیں۔۔۔

وفاوں کی۔۔۔ جفاوں کی۔۔۔

چلو کچھ بات کرتے ہیں۔۔۔

بکھرے کی۔۔۔ بچھڑنے کی۔۔۔

بکھر کر پھر سمٹنے کی۔۔۔

بچھڑ کر پھر سے ملنے کی۔۔۔

میں تم سے دور ہو جاوں۔۔۔

تمہیں جب بھی طلب ہو مجھ سے ملنے کی۔۔۔

کسی ویران ساحل پر کھڑے ہو کر۔۔۔

مجھے آواز دے دینا۔۔۔

تیری پلکوں کی چوکھٹ پر جو دستک دے۔۔۔

سمجھ لینا کہ وہ میں ہوں۔۔۔

(شاعرہ: ت ع)



7 تبصرے برائے “چلو کچھ بات کرتے ہیں۔۔۔”

  1. 1جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین

    بہت خوب۔ وفاؤن کی ۔ جفاؤں کی۔۔ یعنی زنگی کی اونچ نیچ کی بات کرتے ہیں۔

  2. 2fikrepakistan

    خوبصورت نظم ہے۔

  3. 3خرم ابن شبیر

    یہ ت ع صاحب کون ہیں

  4. 4عمران اقبال

    خرم بھائی۔۔۔ نظم کے بارے میں کچھ نہیں لکھا آپ نے۔۔۔ اور ڈائریکٹ ہی شاعر تک پہنچ گئے۔۔۔ 😉

    سائیں۔۔۔ پہلی بات کہ شاعر نہیں۔۔۔ شاعرہ ہیں۔۔۔ اور دوسری بات۔۔۔ کہ کون ہیں۔۔۔ تو۔۔۔ پردہ میں رہنے دو۔۔۔ پردہ نا اٹھاو۔۔۔ 🙂

  5. 5خرم ابن شبیر

    اصل میں کبھی نام نہیں پڑھا تھا اس لیے تجسس ہوگیا تھا۔ ایک اچھی آزاد نظم ہے

  6. 6Asma Khan

    bohat khoobsorate nazam

ٹریک بیکس

  1. 1. جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین
  2. 2. fikrepakistan
  3. 3. چلو کچھ بات کرتے ہیں۔۔۔ | Tea Break
  4. 4. خرم ابن شبیر
  5. 5. عمران اقبال
  6. 6. خرم ابن شبیر
  7. 7. Asma Khan

تبصرہ کیجیے

 
error: خدا کا خوف کھاو بھائی، کیا کرنا ہے کاپی کر کے۔۔۔