لبیک – قسط اول – پہلا تجربہ

131 بار دیکھا گیا

یکم ستمبر سوا دس بجے فلائیٹ ا لدمام ائیر پورٹ پر اتری۔۔۔ اور میں جہاز سے اتر کر امیگریشن کی طرف بڑھ گیا۔۔۔ مختلف کاونٹروں پر لمبی قطار یں پہلے ہی منتظر تھیں۔۔۔ میں بھی ایک قطار میں کھڑا اپنی باری کا انتظار کرنے لگا۔۔۔ مجھے لینے آئے عظیم، توصیف اور خرم باہر میرے منتظر تھے۔۔۔ میں نے فون پر انہیں اپنے پہنچنے کی اطلاع دی اور کہا کہ انشاءاللہ آدھے گھنٹے میں سارے مراحل سے گزر کر میں ان سے ملوں گا۔۔۔ مجھے نہیں معلوم تھا کہ اگلے کچھ گھنٹے میرے لیے نہایت اذیت ناک ہوں گے۔۔۔


تقریباً آدھا گھنٹہ بیت گیا اور جس قطار میں میں کھڑا تھا وہ ہلنے کا نام ہی نہیں لے رہی تھی۔۔۔ کل ملا کر صرف تین کاونٹر پر سعودی حکام بیٹھے تھے۔۔۔ اور تینوں قطاریں بس آہستہ آہستہ رینگ رہی تھیں۔۔۔ میں نے جھنجلاہٹ میں تھوڑا آگے بڑھ کر دیکھا کہ مسئلہ کیا ہے، لوگ نکل کیوں نہیں رہے۔۔۔ دیکھا، کہ تینوں حکام آپس میں خوش گپیوں میں مصروف ہیں اور کسی کے سامنے کوئی مسافر نہیں کھڑا۔۔۔ جو آگے بڑھتا، اسے اشارے سے اپنی جگہ کھڑا رہنے کا کہتے اور پھر کبھی موبائل سے کھیلنے لگتے اور کبھی اٹھ کر دوسرے کے پاس جا کر کھڑے ہو جاتے۔۔۔ میرا دماغ گھوم گیا کہ یہ کر کیا رہے ہیں۔۔۔ میرا دل چاہا کہ جا کر کسی سعودی سے بات کروں کہ بھائی کچھ کام کر اور ہمیں فارغ کر۔۔۔ لیکن یہ بھی جانتا تھا کہ بھینس کے آگے بین بجانے کا کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔۔۔ اسی جھنجلاہٹ میں واپس اپنی جگہ آ کر کھڑا ہو گیا۔۔۔

کچھ دیر بعدشاید انہیں خیال آیا کہ اب کچھ کام کرنا چاہیے۔۔۔ تو ان میں سے دو نے کام شروع کیا اور تیسرا اسی طرح اونچی اونچی آواز میں دوسروں کو چھیڑنے میں مصروف ہو گیا۔۔۔ تقریباً سوا گھنٹے کی انتظار کے بعد میرا نمبر بھی آ ہی گیا۔۔۔ امیگریشن کے افسر نے میرا پاسپورٹ دیکھا اور پھر میری طرف واپس پھینک دیا۔۔۔ اور “نیو ویزا “کہہ کر ہاتھ کے اشارے سے آخری کاونٹر پر جانے کا حکم دے دیا۔۔۔ میں نے حیرت اور غصے سے اسے دیکھااور کہا کہ میں پچھلے سوا گھنٹے سے اپنی باری کا انتطار کر رہا ہوں، اس لیے براہ مہربانی یہیں پر پاسپورٹ پر سٹیمپ لگا دے۔۔۔ وہ مجھ سے بھی زیادہ حیرت اور غصے سے دھاڑا اور “نیو ویزا” کہہ کر پھر آخری کاونٹر کی طرف اشارہ کر دیا ۔۔۔ میں سمجھ گیا کہ بھائی صاحب کو میری بات سمجھ نہیں آئی ۔۔۔ اور اس کا وقت مزید کھوٹا کرنے سے بہتر ہے کہ میں شرافت سے آخری کاونٹر پر جا کر کھڑا ہو جاوں۔۔۔

آخری کاونٹر بدقسمتی سے اسی افسر کا تھا جو باقی دو افسران کو جگتیں مار رہا تھا اور اس کا کام کرنے بلکل بھی دل نہیں چاہ رہا تھا۔۔۔ میں ایک پاکستانی بھائی سے بات چیت کے بہانے اس کے آگے جا کر کھڑا ہو گیا۔۔۔ وہ بھی کوئی نہایت ہی شریف آدمی تھا جس نے خاموشی سے مجھے اپنے سے پہلے کھڑا ہونے کی اجازت دے دی۔۔۔ یہ قطار ان حضرات پر مشتمل تھی جو نئے ویزٹ یا ایمپلائمنٹ ویزے پر سعودیہ ظہور پزیر ہوئے تھے۔۔۔

بارہ بجتے ہی تینوں کاونٹرز سے حکام اٹھے اور کہیں غائب ہو گئے۔۔۔ اب اگلا آدھا گھنٹہ ہمیں پھر سے انتظار کرنا تھا کہ کوئی آئے اور ہمیں انتظار کی اس کوفت سے آزاد کرے۔۔۔ آخر کار دو اہلکار ہنستے کھیلتے آئے اور دو کانٹرز پر بیٹھ کر خوش گپیاں کرنے لگے۔۔۔ ہمارا خالی کاونٹر اب بھی ہمارا منہ چڑا رہا تھا۔۔۔ انتظار اور یہ گھڑیاں اتنی تکلیف دہ تھیں کہ بتانا مشکل ہے۔۔۔

ایک بجے ایک چھوٹے سے قد کا سعودی اہلکار ہمارے سامنے سے منہ میں سگریٹ سلگائے گزرا اور ہم پر نہایت طنزیہ نگاہیں ڈال کر بولا “ویٹ”۔۔۔

ہمیں تھوڑی سے ڈھارس بندھی کہ چلو اب آ ہی گیا ہے بندہ ۔۔۔ لیکن یہ بندہ بھی کہیں دوسرے کمرے میں جا کر گم ہو گیا۔۔۔ ڈیڑھ بجے وہی حضرت کہیں سے نمودار ہوئے اور کاونٹر پر آ کر بیٹھ گئے۔۔۔ اور اپنے موبائل سے کھیلنے لگے۔۔۔ آخر کار ان کے ذاتی کام ختم ہوئے اور انہیں اپنا آفیشل کام کرنے کا خیال آیا۔۔۔ اور انہوں نے بندے بلانے شروع کر دیے۔۔۔ دو بجے کے قریب میرا نمبر آیا۔۔۔ اس نے بغور میری شکل دیکھی اور پھر ویزے پر چھپی میری تصویر دیکھی۔۔۔ اور ہاتھوں کے اشارے سے فنگر سکینر پر ہاتھ رکھنے کو کہا۔۔۔ اور پاسپورٹ پر “اینٹری” کی سٹیمپ لگا دی۔۔۔

امیگریشن سے باہر نکل کر اپنا سامان سنبھالتے ہوئے میرے منہ سے نکلا۔۔۔۔

“Welcome to Kingdom of Saudi Arabia…

جاری ہے

ٹیگز: , , ,

اس پوسٹ کے بارے میں اپنے احساسات ہم تک پہنچائیں یہاں تبصرہ کریں

تبصرے بذیعہ فیس بک۔۔۔۔

10 تبصرے

تبصرہ کرتے وقت مت بھولئے کہ آپ بہت اچھے/اچھی/درمیانےقسم کے اچھے/ ہیں

error: خدا کا خوف کھاو بھائی، کیا کرنا ہے کاپی کر کے۔۔۔
%d bloggers like this: